Welcome to my blog!

Meet the Author

This page is dedicated to all the art, poetry, literature, music, nature, solitude and book lovers. Do what makes your soul happy. Love and Peace. - D

Looking for something?

Subscribe to this blog!

Receive the latest posts by email. Just enter your email below if you want to subscribe!

Showing posts with label khana badosh poetrt. Show all posts
Showing posts with label khana badosh poetrt. Show all posts

Wednesday, November 26, 2014

اک وہی مست با خبر نکلا


اک وہی مست با خبر نکلا
جس کو کہتے تھے سب خراب خراب
رند بخشے گئے قیامت میں
!...شیخ کہتا رہا حساب حساب

Friday, November 7, 2014

سائیاں میرے اچھے سائیاں


  سائیاں میرے اچھے سائیاں  
سائیاں ذات ادھوری ہے
سائیاں بات ادھوری ہے
سائیاں رات ادھوری ہے
سائیاں مات ادھوری ہے
دشمن چوکنا ہے لیکن
سائیاں گھات ادھوری ہے
سائیاں تیرے گاوں میں
دکھ کی سیاہ فضاوں مین
نامانوس ہواؤں میں
لوگوں اور بلاؤں مین
قید ہوے ہیں مدت سے
ہم بےکار دعاؤں میں
سائیاں رنج ملال بہت
دیوانے بےحال بہت
قدم قدم پر جال بہت
پیار محبت کال بہت
اور اسی عالم میں سائیاں
گزر گے ہیں سال بہت
سائیاں ہر سو درد بہت
موسم موسم سرد بہت
راستہ راستہ گرد بہت
چہرہ چہرہ زرد بہت
اور ستم ڈھانے کی خاطر
تیرا اک اک فرد بہت
سائیاں تیرے شہر بہت
گلی گلی میں زہر بہت
خوف زدہ ہے دہر بہت
اس پر تیرا قہر بہت
کالی راتیں اتنی کیوں
ہم کو ایک ہی پہر بہت
سائیاں دل مجبور بہت
روح بھی چور و چور بہت
پیشانی بےنور بہت
اور لمحےمغرور بہت
ایسے مشکل عالم میں
تو بھی ہم سے دور بہت
سائیاں راہیں تنگ بہت
دل کم ہیں اور سنگ بہت
پھر بھی تیرے رنگ بہت
خلقت ساری تنگ بہت
سائیاں تم کو آتے ہیں
بہلانے کے ڈھنگ بہت
سائیاں میرے تارے گم
رات کے چند سہارے گم
سارے جان سے پیارے گم
انکھین گم نظارے گم
ریت میں انسو ڈوب گے
راکھ میں ہوے شرارے گم
سائیاں میری راتیں گم
ساون اور برساتیں گم
لب گم گشتہ باتیں گم
بینای گم جھاتیں گم
جیون کے اس صحرا میں
سب جیتں ، سب ماتیں گم
سائیاں جان بیمار ہوئی
صدموں سے دوچار ہوئی
ہر شے سے بےزار ہوئی
پریتم دل ازار ہوئی
ہر اک سپنا سنگ ہوا
ہر خواہش دیوار ہوئی
سائیاں رشتے ٹوٹ گئے
سائیاں اپنے چھوٹ گئے
سچ گئے اور جھوٹ گئے
تیز مقدر پھوٹ گئے
جانے کیسے ڈاکو تھے جو
لٹے ہوؤں کو لوٹ گئے
سائیاں خواب اداس ہوئے
سرخ گلاب اداس ہوئے
دل بے تاب اداس ہوئے
دور سحاب اداس ہوئے
جب سے صحرا چھوڑ دیا
ریت ، سراب اداس ہوئے
سائیاں تنہا شاموں میں
چنے گے ہیں باموں میں
چاہت کے الزاموں میں
شامل ہوے غلاموں میں
اپنی ذات نہ ذاتوں میں
اپنا نام نہ ناموں میں
سائیاں ویرانی کے صدقے
اپنی یزدانی کے صدقے
جبر انسانی کے صدقے
لمبی زندانی کے صدقے
سائیاں میرے اچھے سائیاں
اپنی رحمانی کے صدقے
سائیاں میرا درد گھٹا
سائیاں میرے زخم بجھا
سائیاں میرے عیب مٹا
سائیاں کوئی نوید سنا
اتنے کالے موسم میں
سائیاں اپنا اپ دیکھا
سائیاں میرے اچھے سائیاں
سائیاں میرے دولے سائیاں
سائیاں میرے پیارے سائیاں
سائیاں میرے بیبے سائیاں،،
ـــــــــــــــــــ
میرے من میں دیپ جلا سائیں
کبھی رات اندھیری بھی ٹوٹے
کبھی صبح صادق بھی پھوٹے
کبھی چمکے تیری ضیا سائیں
میرے من میں دیپ جلا سائیں
ہو رنج بہاراں جیسا بھی
ہو بادو باراں جیسا بھی
ہو جتنی تیز ہوا سائیں
میرے من میں دیپ جلا سائیں
کبھی جھوٹ نہ بول سکو مولا
کبھی کفر نہ تول سکومولا
میں کروں ہمیش وفا سائیں
میرے من میں دیپ جلا سائیں
جبار قہر خدا سائیں
رحمٰن رحیم سدا سائیں
میرے بےپروا خفا سائیں
میرے من میں دیپ جلا سائیں
سب پردے آپ ہٹا سائیں
سب ظلمت آپ مٹا سائیں
سب راستے آپ دیکھا سائیں
میرے من میں دیپ جلا سائیں
میری تجھ سے یہی دعا سائیں

Thursday, October 23, 2014

نجوم و رمل کے سبھی علوم ہمیں آتے تھے _


نجوم و رمل کے سبھی علوم ہمیں آتے تھے _


مگر یہ عشق تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ سب زائچے غلط نکلے!!

Friday, September 5, 2014

مجهے تها زعم مگر میں بکهر گیا محسن


مجهے تها زعم مگر میں بکهر گیا محسن

وه ریزه ریزه تها اور اپنے اختیار میں تها

Wednesday, August 20, 2014

•ایک پل کسی خواہش کی زیارت کو اُٹھے تھے


ایک پل کسی خواہش کی زیارت کو اُٹھے تھے

اندر کے قلندر نے____ بڑی دیر نچایا

یہ سوچ لینا مجھے چھوڑنے سے پہلے تم


یہ سوچ لینا مجھے چھوڑنے سے پہلے تم

تمہارا عشق میرا آخری سہارا ہے
ابھی تو کھال اُدھڑنی ہے اِس تماشے میںابھی دھمال میں جوگی نے سانس ہارا ہے



•عشق ہے صحرا، عشق سمندر


عشق ہے صحرا، عشق سمندر
عشق بھکاری ، عشق سکندر
عشق شہنشاہ، عشق قلندر
عشق ہے مسجد، عشق ہے مندر
ہر اِک جا ہرسُوں.. عشق دے لائق توں ایں مولا، عشق دے لائق توں

Saturday, May 31, 2014

Monday, May 26, 2014

Main Zamane Ko Bhool Jata Hoon___!

Main Zamane Ko Bhool Jata Hoon___!

Aap Jab Humkalam Hotay Hain ___!!!



Hai ajab Ik Suroor Ka Aalam 
Raqs_e_Darwaish Mujh Main Jari Hai >@



Friday, May 16, 2014

نہ کہیں سے دُور ہیں مَنزلیں نہ کوئی قریب کی بات ہے



   نہ کہیں سے دُور ہیں مَنزلیں نہ کوئی قریب کی بات     ہے
  جسے چاہیں اُس کو نواز دیں یہ درِحبیبﷺ کی بات     ہے
  جسے چاہا دَر پہ بُلالیا ، جسے چاہا اپنا بنا لیا
  یہ بڑے کرم کے ہیں فیصلے ، یہ بڑے نصیب       کی بات ہے
  وہ خدا نہیں ، بخدا نہیں، مگر وہ خدا سے جُدا نہیں
  وہ ہیں کیا مگر وہ کیا نہیں یہ محب حبیبﷺ کی بات     ہے
   وہ مَچل کے راہ میں رہ گئی ، یہ تڑپ کے دَ ر سے      لپٹ گئی
   وہ کِسی امیر کی آہ تھی، یہ کِسی غریب کی بات ہے
   تُجھے اے منوّرِ بے نوا درِ شاہﷺ سے چاہئیے      اور کیا
 
 جو نصیب ہو کبھی سامنا تو بڑے نصیب کی بات ہے......*

سائیں!تو اپنی چلم سے


سائیں!تو اپنی چلم سے
تھوڑی سی آگ دے دے
میں تیری اگر بتی ہوں
اور تیری درگاہ پر مجھے
ایک گھڑی جلنا ہے۔ ۔ ۔
یہ تیری محبت تھی
جو اس پیکر میں ڈھلی
ا ب پیکرسلگے گا
تو ایک دھواں سا اٹھے گا
دھوئیں کا لرزاں بدن
آہستہ سے کہے گا
جو بھی ہوا بہتی ہے
درگاہ سے گذرتی ہے
تیری سانسوں کو چھوتی ہے
سائیں!آج مجھے
اس ہوا میں ملنا ہے
سائیں!تو اپنی چلم سے
تھوڑی سی آگ دے دے
میں تیری اگر بتی ہوں
اور تیری درگاہ پر مجھے
ایک گھڑی جلنا ہے۔ ۔ ۔
جب بتی سلگ جا ئے گی
ہلکی سی مہک آئے گی
اور پھر میری ہستی
راکھ ہو کر
تیرے قدم چھوئے گی
اسے تیری درگاہ کی
مٹی میں ملنا ہے۔ ۔ ۔
سائیں!تو اپنی چلم سے
تھوڑی سی آگ دے دے
میں تیری اگر بتی ہوں
اور تیری درگاہ پر مجھے
ایک گھڑی جلنا ہے

رقصم بہ رقصیم کہ خوبان جہانیم




رقصم بہ رقصیم کہ خوبان جہانیم
نازم بہ نازیم کہ در عینی عیانیم
رقص کرنے والوں کے ساتھ رقص کیا ۔جو جہان بھر کے خوبرو ہیں
ہم نازاں ہیں کہ ہم پر سب کچھ ظاہر اور عیاں ہے
چوں تشنہ باشیم کہ دریائے محیطیم
چوں گنج بجوئیم کہ ما گوہر کانیم
پیاسا ہوں باوجود کہ سمندر میں محیط ہوں
خزانے کی تلاش ہے باوجود کہ میں خود لعل و جواہر کی کان ہوں
نہ آبیم نہ بادیم و نہ خاکیم و نہ آتش
مائیم بہر صورت و ما کون و مکانیم
نہ پانی نہ ہوا نہ مٹی نہ آگ
جو بھی ہوں کون و مکان والا ہوں
نہ اسمیم نہ جسمیم نہ بسمیم و نہ رسمیم
نہ میمیم نہ جیمیم نہ اینیمم و نہ آنیم
نہ اسم ہون نہ جسم ہوں نہ بسم ہوں نہ رسم ہوں
نہ میم نہ جیم نہ یہ نہ وہ ہوں
در عقل گنجیم کہ آں نور خدائیم
در فہم نہ آئیم کہ بے نام و نشانیم
عقل سے ماورا نور خدا ہوں
فہم میں نہ آسکوں کہ بے نام و بے نشان ہوں
چوں براق سواریم بنازیم نہ لاہوت
زکس باک نہ داریم و اغیار برانیم
براق پر سوار ہو کر عالم لاہوت جا رہا ہوں
کسی قسم کا بھی ڈر خوف اور دشمن کی پرواہ نہیں ہے
مطلوب نہ طلبیم کہ ایں طلب حرام است
اللہ نگوئیم کہ در شرک بمانیم
مطلوب کو طلب نہیں کرتا کہ یہ حرام ہے
اللہ بھی نہیں کہتا ہے کہ شرک نہ ہو جائے
شہباز پریدیم و از خویش گذشتیم
با دوست بمانیم و بے دوست ندانیم
شہباز ہوں اپنے آپ سے بھی پرواز کر گیا ہوں
اب محبوب کے ساتھ ہوں اور سوائے محبوب کے کچھ نہیں جانتا

Saturday, May 10, 2014

Tumne Dekhi Hai Kabhi



Tumne Dekhi Hai Kabhi
Ishq K Mast Qalander Ki Dhamaal
Dard Ki Laye Main Patkha Hua Sir Aur Tarapta Hua TanMan.
Pairh Pathar Pa Bhi Par Jayen  to  Dhool Uthne Lage
Aur Kisi Dehaan Main Lipta Hua Yeh Hijar Zada Jisam
Raqs Karta Hua Agr Jaye Kaheen
To Zameeen Dard Ki shiddat Se Tarapne Lag Jaye
Hijar Ki Lambi Musafat Ka Ridham Ghoron Ki Tapon
Main Gandah Hai
Raqs Darasal Riyazat Hai Kisi Aise Safar Ki
Jise Woh Kar Nahin Paya
Tumne Dekhe Hain Kabhi
Sheher K Wast Main Gharyal K Rondey Hue Pal
Jin Main Chaht K Hazaron Qis'se
Ishq K sabz Ujale Main Kaaiii Zard Badan
Apney Honey Ki Saza Kaat Rahai Hain
Tumne Dekhai Nahin Shahyed
Ishq Main Haare Hue Jisam
Jisam Aise K Jo KAbhi Poore Bhi Kat Jayen
To Phr Khoon K Jagah Ashk Nikalte Hain Wahan
Hasraten Dil Main Chupaaye Hue Kuch Log Yahan
Dam Badam Behti Hui Ankhon Se Likhte Hain Kahani
Ye Naaii Baat Nahin 
Waqiya Aik Hai K kirdaar Badal Jate Hain
Aik Teesh Hai Mgr waar Badal Jaye Hain !


Idhar tum ... udhar hum

Idhar Tum
Udhar Hum
Idhar Udhar
Hata Le
Tum Hum
Tum Hum
Hum Main TUm
Dono Hogaye Gum @

Thursday, March 6, 2014

Tumhein Dillagi Bhool Jani Paray Gi


Tumhein Dillagi Bhool Jani Paray Gi
Mohabbat Ki Raahon Mein Aa Kar To Daikho
Tarapnay Pay Mairay Na Phir Tum Haso Gay
Kabhi Dil Kisi Say Laga Ker To Daikho
Hoonton K Paas Aaye Hasi Kia Majaal Hai
Dil Ka Moamla Hai Koi Dillagi Nahi
Zakhm Pay Zakhm Pay Kha K Ji Apnay Laho K Ghoont Pe
Aah Na Ker Laboon Ko See Ishq Hai Dillagi Nahi
Dil Laga Ker Pata Chalay Ga Tumhein
Aashqi Dillagi Nahi Hoti
Kuch Khail Nahi Hai Ishq Ki Laag
Pani Na Samajh Yeah Aag Hai Aag
Khoon Rula’ay Gi Yeah Lagi Dil Ki
Khail Samjho Na Dillagi Dil Ki
Yeah Ishq Nahi Aasan Bus Itna Samajh Li Jay
Ik Aag Ka Darya Hai Aur Doob K Jana Hai
Tumhein Dillagi Bhool Jani Paray Gi
Mohabbat Ki Raahon Mein Aa Kar To Daikho
Tarapnay P Mairay Na Phir Tum Haso Gay
Kabhi Dil Kisi Say Laga Ker To Daikho
Wafaoon Ki Hum Say Tawwaqu Nahi Hai
Magar Aik Baar Aazma Ker To Daikho
Zamanay Ko Apna Bana Ker To Daikha
Hamein Bhi Tum Apna Bana Ker To Daikho
Khuda K Liyeah Chor Do Ub Yeah Pardah
Rukh Say Naqaab Utha Ke
Bari Dair Ho Gaye Maahol Ko Tilawat-E-Quran Kiyeah Hoay
Khuda K Liyeah Chor Do Ub Yeah Pardah
Khuda K Liyeah Chor Do Ub Yeah Pardah
Hum Na Samjahy Teri Nazroon Ka Taqaza Kia Hai
Kabhi Pardah Kabhi Jalwa Yeah Tamasha Kia Hai
Khuda K Liyeah Chor Do Ub Yeah Pardah
Khuda K Liyeah Chor Do Ub Yeah Pardah
Jane E Jaan Hum Say Yeah Uljhan Nahi Dekhi Jati
Khuda K Liyeah Chor Do Ub Yeah Pardah
Khuda K Liyeah Chor Do Ub Yeah Pardah
Khuda K Liyeah Chor Do Ub Yeah Pardah
Ke Hein Aaj Hum Tum Nahi Ghair Koyi
Shab-E-Wasl Bhi Hai Hijaab Is Qadar Kiyoon
Zara Rukh Say Aanchal Utha Ker To Daikho
Jafa’ein Bohot Kiii Bohot Zulm Dha’ay
Kabhi Ik Nigah-E-Karam Is Taraf Bhi
Hamesha Ho’ay Daikh Ker Mujh Ko Barham
Kisi Din Zara Muskura Ker To Daikho
Jo Ulfat Mein Har Ik Sitam Hai Gawara
Yeah Sub Kuch Hai Paas E Wafa Tum Say Warna
Sata’tay Ho Din Raat Jiss Tarah Mujh Ko
Kisi Ghair Ko Yoon Sata Ker To Daikho
Agar Chay Kisi Baat Per Woh Khafa Hein
To Acha Yeah He Hai Tum Apni Si Ker Lo
Woh Manay Na Manay Yeah Marzi Hai Un Ki
Magar Un Ko Purnam Mana Ker To Daikho
Tumhein Dillagi Bhool Jani Paray Gi
Mohabbat Ki Raahon Mein Aa Kar To Daikho